Aik Meri Jaan Mein Our Ik Lehar Sahraoon Mein Thi

ایک میری جاں میں اور اک لہر صحراؤں میں تھی

ایک میری جاں میں اور اک لہر صحراؤں میں تھی

کچھ نکیلے سنگ تھے کچھ ریت دریاؤں میں تھی

کیا ہوا وہ گرم دوپہروں میں یخ ہونا مرا

کیا ہوئی وہ دھوپ سی لذت کہ جو چھاؤں میں تھی

کیا خبر کیا جسم تھے کیوں موج صحرا ہو گئے

کیا بتائیں کس بلا کی گونج دریاؤں میں تھی

شہر والے کب کے محروم بصارت ہو چکے

رت جگے کی رسم تو بس آنکھ کے گاؤں میں تھی

اپنے سودا کے لیے یہ عزت سنگ رسا

کچھ عدو کے ہاتھ میں کچھ اپنی ریکھاؤں میں تھی

اب تو جسموں میں لہو کی بوند تک باقی نہیں

پھر بھی ہم کو لوٹنے کی حرص آقاؤں میں تھی

تو اگر آزاد لمحوں کا پیمبر ہے نجیبؔ

رات کی زنجیر کیوں پھر وقت کے پاؤں میں تھی

نجیب احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(800) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Najeeb Ahmed, Aik Meri Jaan Mein Our Ik Lehar Sahraoon Mein Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Najeeb Ahmed.