Hum –apne Ghar Se Barang Howa Nikaltay Hain

ہم اپنے گھر سے برنگ ہوا نکلتے ہیں

ہم اپنے گھر سے برنگ ہوا نکلتے ہیں

کسی کے حق میں کسی کے خلاف چلتے ہیں

ابھی تو دن ہے ابھی تخت آسماں پہ چمک

طلوع شام کے ساتھ آفتاب ڈھلتے ہیں

چلے بھی ہم تو مہ و سال کی مثال چلے

فقیر لوگ انہی سلسلوں میں پلتے ہیں

اڑے بھی ہم تو اسی سمت رخ رہا اپنا

جدھر اڑیں تو فرشتوں کے پر بھی جلتے ہیں

ہمارے عکس ترے شہر میں رہے آباد

کہ اس جگہ تو فقط آئنے بدلتے ہیں

زمیں پہ پاؤں ذرا احتیاط سے دھرنا

اکھڑ گئے تو قدم پھر کہاں سنبھلتے ہیں

نجیبؔ جن کو غرض ہو نہ کچھ زمانے سے

انہی کے ساتھ ابد تک زمانے چلتے ہیں

نجیب احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(365) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Najeeb Ahmed, Hum –apne Ghar Se Barang Howa Nikaltay Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Najeeb Ahmed.