Sir Niaz Woh Soda Nazar Nahi Ata

سر نیاز وہ سودا نظر نہیں آتا

سر نیاز وہ سودا نظر نہیں آتا

وہ جیسا پہلے تھا ویسا نظر نہیں آتا

وہ رات تھی تو بسر ہو گئی بہر صورت

اگر یہ دن ہے تو کٹتا نظر نہیں آتا

یہ کس کی اوٹ میں جلتے رہے رتوں کے چراغ

کسی گلی میں اجالا نظر نہیں آتا

رکوں تو حجلۂ منزل پکارتا ہے مجھے

قدم اٹھاؤں تو رستہ نظر نہیں آتا

ہوا میں روئی کے گالوں کی طرح اڑتا ہے

مجھے وہ قول کا پکا نظر نہیں آتا

نجیبؔ چار طرف نفرتوں کی ٹھاٹھیں ہیں

چڑھا ہوا ہو تو دریا نظر نہیں آتا

نجیب احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(409) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Najeeb Ahmed, Sir Niaz Woh Soda Nazar Nahi Ata in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Najeeb Ahmed.