Thakan Se Chor Badan Dhool Mein Ata Sir Tha

تھکن سے چور بدن دھول میں اٹا سر تھا

تھکن سے چور بدن دھول میں اٹا سر تھا

میں جب گرا تو مرے سامنے مرا گھر تھا

تہی ثمر شجر خواب کچھ نڈھال سے تھے

زمیں پہ سوکھی ہوئی پتیوں کا بستر تھا

اسی کی آب تھی اس شب میں روشنی کی لکیر

وہ ایک شخص کہ جو کانچ سے بھی کم تر تھا

نہیں کہ گرد ہیں سات آسماں ہی گردش میں

زمیں کی طرح مرے پاؤں میں بھی چکر تھا

میں آج بھی اسی بستی میں جی رہا ہوں جہاں

کسی کے ہاتھ میں خنجر کسی کے پتھر تھا

بڑھا کے ہاتھ خزاں کی رتوں نے نوچ لیا

ہوا کے جسم پہ جو خوشبوؤں کا زیور تھا

سروں پہ ابر کشا دھوپ کی تمازت تھی

نجیبؔ زیر قدم ریت کا سمندر تھا

نجیب احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(676) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Najeeb Ahmed, Thakan Se Chor Badan Dhool Mein Ata Sir Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Najeeb Ahmed.