Mohabaton Ka Sila Nahi Hai

محبتوں کا صلہ نہیں ہے

محبتوں کا صلہ نہیں ہے

لبوں پہ حرف دعا نہیں ہے

نہیں وہ تصویر پاس میرے

سو ہاتھ میرا جلا نہیں ہے

میں اپنی لو میں ہی جل رہی ہوں

جو بجھ گیا وہ دیا نہیں ہے

بس اک پیالی ہے میز پر اور

وہ منتظر اب مرا نہیں ہے

لکھا جنم دن پہ اس کو میں نے

وہ خط بھی اس کو ملا نہیں ہے

میں کس لیے پار جاؤں شاہینؔ

وہاں مرا نا خدا نہیں ہے

نجمہ شاہین کھوسہ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(853) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Najma Shaheen Khosa, Mohabaton Ka Sila Nahi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 39 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Najma Shaheen Khosa.