Awalain Chaand Ne Kya Baat Sujhai Mujh Ko

اولیں چاند نے کیا بات سجھائی مجھ کو

اولیں چاند نے کیا بات سجھائی مجھ کو

یاد آئی تری انگشت حنائی مجھ کو

سر ایوان طرب نغمہ سرا تھا کوئی

رات بھر اس نے تری یاد دلائی مجھ کو

دیکھتے دیکھتے تاروں کا سفر ختم ہوا

سو گیا چاند مگر نیند نہ آئی مجھ کو

انہی آنکھوں نے دکھائے کئی بھرپور جمال

انہیں آنکھوں نے شب ہجر دکھائی مجھ کو

سائے کی طرح مرے ساتھ رہے رنج و الم

گردش وقت کہیں راس نہ آئی مجھ کو

دھوپ ادھر ڈھلتی تھی دل ڈوبتا جاتا تھا ادھر

آج تک یاد ہے وہ شام جدائی مجھ کو

شہر لاہور تری رونقیں دائم آباد

تیری گلیوں کی ہوا کھینچ کے لائی مجھ کو

ناصر کاظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(430) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasir Kazmi, Awalain Chaand Ne Kya Baat Sujhai Mujh Ko in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 100 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasir Kazmi.