Din Dhala Raat Phir Aa Gayi So Raho So Raho

دن ڈھلا رات پھر آ گئی سو رہو سو رہو

دن ڈھلا رات پھر آ گئی سو رہو سو رہو

منزلوں چھا گئی خامشی سو رہو سو رہو

سارا دن تپتے سورج کی گرمی میں جلتے رہے

ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا پھر چلی سو رہو سو رہو

گرم سنسان قریوں کی دھرتی مہکنے لگی

خاک رشک ارم بن گئی سو رہو سو رہو

رزم گاہ جہاں بن گئی جائے امن و اماں

ہے یہی وقت کی راگنی سو رہو سو رہو

کیسے سنسان ہیں آسماں چپ کھڑے ہیں مکاں

ہے فضا اجنبی اجنبی سو رہو سو رہو

تھک گئے ناقہ و سارباں تھم گئے کارواں

گھنٹیوں کی صدا سو گئی سو رہو سو رہو

چاندنی اور دھوئیں کے سوا دور تک کچھ نہیں

سو گئی شہر کی ہر گلی سو رہو سو رہو

گردش وقت کی لوریاں رات کی رات ہیں

پھر کہاں یہ ہوا یہ نمی سو رہو سو رہو

ساری بستی کے لوگ اس مدھر لے میں کھوئے گئے

دور بجنے لگی بانسری سو رہو سو رہو

دور شاخوں کے جھرمٹ میں جگنو بھی گم ہو گئے

چاند میں سو گئی چاندنی سو رہو سو رہو

گھر کے دیوار و در راہ تک تک کے شل ہو گئے

اب نہ آئے گا شاید کوئی سو رہو سو رہو

سست رفتار تارے بھی آنکھیں جھپکنے لگے

غم کے مارو گھڑی دو گھڑی سو رہو سو رہو

منہ اندھیرے ہی ناصرؔ کسے ڈھونڈنے چل دیئے

دور ہے صبح روشن ابھی سو رہو سو رہو

ناصر کاظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1307) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasir Kazmi, Din Dhala Raat Phir Aa Gayi So Raho So Raho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 100 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasir Kazmi.