Door Fallak Jab Dohrata Hai Mausam Gul Ki Raton Ko

دور فلک جب دہراتا ہے موسم گل کی راتوں کو

دور فلک جب دہراتا ہے موسم گل کی راتوں کو

کنج قفس میں سن لیتے ہیں بھولی بسری باتوں کو

ریگ رواں کی نرم تہوں کو چھیڑتی ہے جب کوئی ہوا

سونے صحرا چیخ اٹھتے ہیں آدھی آدھی راتوں کو

آتش غم کے سیل رواں میں نیندیں جل کر راکھ ہوئیں

پتھر بن کر دیکھ رہا ہوں آتی جاتی راتوں کو

مے خانے کا افسردہ ماحول تو یوں ہی رہنا ہے

خشک لبوں کی خیر مناؤ کچھ نہ کہو برساتوں کو

ناصرؔ میرے منہ کی باتیں یوں تو سچے موتی ہیں

لیکن ان کی باتیں سن کر بھول گئے سب باتوں کو

ناصر کاظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1272) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasir Kazmi, Door Fallak Jab Dohrata Hai Mausam Gul Ki Raton Ko in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 100 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasir Kazmi.