Tare Anay Ka Dhoka Sa Raha Hai

ترے آنے کا دھوکا سا رہا ہے

ترے آنے کا دھوکا سا رہا ہے

دیا سا رات بھر جلتا رہا ہے

عجب ہے رات سے آنکھوں کا عالم

یہ دریا رات بھر چڑھتا رہا ہے

سنا ہے رات بھر برسا ہے بادل

مگر وہ شہر جو پیاسا رہا ہے

وہ کوئی دوست تھا اچھے دنوں کا

جو پچھلی رات سے یاد آ رہا ہے

کسے ڈھونڈوگے ان گلیوں میں ناصرؔ

چلو اب گھر چلیں دن جا رہا ہے

ناصر کاظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(439) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasir Kazmi, Tare Anay Ka Dhoka Sa Raha Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 100 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasir Kazmi.