Woh Is Ada Se Jo Aaye To Kyun Bhala Nah Lagey

وہ اس ادا سے جو آئے تو کیوں بھلا نہ لگے

وہ اس ادا سے جو آئے تو کیوں بھلا نہ لگے

ہزار بار ملو پھر بھی آشنا نہ لگے

کبھی وہ خاص عنایت کہ سو گماں گزریں

کبھی وہ طرز تغافل کہ محرمانہ لگے

وہ سیدھی سادی ادائیں کہ بجلیاں برسیں

وہ دلبرانہ مروت کہ عاشقانہ لگے

دکھاؤں داغ محبت جو ناگوار نہ ہو

سناؤں قصۂ فرقت اگر برا نہ لگے

بہت ہی سادہ ہے تو اور زمانہ ہے عیار

خدا کرے کہ تجھے شہر کی ہوا نہ لگے

بجھا نہ دیں یہ مسلسل اداسیاں دل کو

وہ بات کر کہ طبیعت کو تازیانہ لگے

جو گھر اجڑ گئے ان کا نہ رنج کر پیارے

وہ چارہ کر کہ یہ گلشن اجاڑ سا نہ لگے

عتاب اہل جہاں سب بھلا دیے لیکن

وہ زخم یاد ہیں اب تک جو غائبانہ لگے

وہ رنگ دل کو دیے ہیں لہو کی گردش نے

نظر اٹھاؤں تو دنیا نگار خانہ لگے

عجیب خواب دکھاتے ہیں نا خدا ہم کو

غرض یہ ہے کہ سفینہ کنارے جا نہ لگے

لیے ہی جاتی ہے ہر دم کوئی صدا ناصرؔ

یہ اور بات سراغ نشان پا نہ لگے

ناصر کاظمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1962) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nasir Kazmi, Woh Is Ada Se Jo Aaye To Kyun Bhala Nah Lagey in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 100 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nasir Kazmi.