حرفِ کاری زبان سے نکلا

حرفِ کاری زبان سے نکلا

تیر تھا، جو کمان سے نکلا

کہہ دیا ہنس کے الوداع اسے

دل عجب امتحان سے نکلا

پھر اسے بُھولنا ۔۔۔۔۔۔۔ ہوا آسان

اک ذرا کیا وہ دھیان سے نکلا

پھر نیا موڑ ہے کہانی میں

پھر کوئی داستان سے نکلا

دھوپ کندن بنائے گی اس کو

دل ترے سائیبان سے نکلا

میری مٹی کی وحشتیں نہ گئیں

شعلہ اک، خاکدان سے نکلا

سہل تھی منزلِ یقیں نسرینؔ

جب گماں درمیان سے نکلا

نسرین سید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(440) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments