Pighalta Dhuwan

پگھلتا دھواں

دور شاداب پہاڑی پہ بنا اک بنگلہ

لال کھپریلوں پہ پھیلی ہوئی انگور کی بیل

صحن میں بکھرے ہوئے مٹی کے راجا رانی

منہ چڑھاتی ہوئی بچوں کو کوئی دیوانی

سیب کے اجلے درختوں کی گھنی چھاؤں میں

پاؤں ڈالے ہوئے تالاب میں کوئی لڑکی

گورے ہاتھوں میں سنبھالے ہوئے تکیے کا غلاف

ان کہی باتوں کو دھاگوں میں سیے جاتی ہے

دل کے جذبات کا اظہار کیے جاتی ہے

گرم چولھے کے قریں بیٹھی ہوئی اک عورت

ایک پیوند لگی ساڑی سے تن کو ڈھانپے

دھندلی آنکھوں سے مری سمت تکے جاتی ہے

مجھ کو آواز پہ آواز دئیے جاتی ہے

اک سلگتی ہوئی سگریٹ کا بل کھاتا دھواں

پھیلتا جاتا ہے ہر سمت مرے کمرے میں

ندا فاضلی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(491) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nida Fazli, Pighalta Dhuwan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 158 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nida Fazli.