Kabhi Kabhi Yeh Sona Pan Khil Jata Hai

کبھی کبھی یہ سونا پن کھل جاتا ہے

کبھی کبھی یہ سونا پن کھل جاتا ہے

بس اک لمحہ آتا ہے ٹل جاتا ہے

تجھ سے مجھ کو بیر سہی پر کبھی کبھی

دنیا تیرا جادو بھی چل جاتا ہے

جان لیا ہے لیکن ماننا باقی ہے

تو سایہ ہے اور سایہ ڈھل جاتا ہے

اک دن میں اشکوں میں یوں گھل جاؤں گا

جیسے کاغذ بارش میں گل جاتا ہے

کس کے قبضے میں ہے خزانہ اجالوں کا

کون زمیں پر تاریکی مل جاتا ہے

اس کو تیری یاد کہوں یا اپنی یاد

شام سے پہلے ایک دیا جل جاتا ہے

عبید صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(463) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Obaid Siddiqi, Kabhi Kabhi Yeh Sona Pan Khil Jata Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 38 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Obaid Siddiqi.