Hum Se Jo Ehad Tha Woh Ehad Shikan Bhool Gaya

ہم سے جو عہد تھا وہ عہد شکن بھول گیا

ہم سے جو عہد تھا وہ عہد شکن بھول گیا

اپنے عشاق کو وہ غنچہ دہن بھول گیا

قیس کا جلوۂ لیلیٰ جو ہوا ہوش ربا

وہ سراسیمہ ہوا نجد کا بن بھول گیا

کیا کرشمہ یہ تری چشم سخن گو نے کیا

کس کی جانب تھا مرا روئے سخن بھول گیا

خار خار غم الفت نے کیا راہ غلط

تیرا مدہوش نظر راہ چمن بھول گیا

نگہ شوق نے دیوانہ بنایا مجھ کو

کچھ خبر اپنی نہیں ہے ہمہ تن بھول گیا

ہو گیا ہوش ربا حسن فریب عالم

نل جو بازی میں لگا عشق دمن بھول گیا

شوق‌ و رم تیرے جو دیکھے ہیں غزال رعنا

چوکڑی اپنی بیاباں میں ہرن بھول گیا

سیر گلزار میں ہے محو تماشا وہ گل

بلبل شیفتہ کو غنچہ دہن بھول گیا

سبزۂ خط نے ترے راہ میں گھیرا مجھ کو

غرق میں ہو نہ سکا چاہ ذقن بھول گیا

محو ہوتا ہی نہیں اس کا کبھی دل سے خیال

یاد کرتا ہی نہیں مشفق من بھول گیا

شاہد مست نے سرمست کیا ہے ساقیؔ

ہم وہ مدہوش ہوئے رنگ سخن بھول گیا

پنڈت جواہر ناتھ ساقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(703) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of PANDIT JAWAHAR NATH SAQI, Hum Se Jo Ehad Tha Woh Ehad Shikan Bhool Gaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of PANDIT JAWAHAR NATH SAQI.