Chiragh Raah Bujha Kya Ke Rah Noma Bhi Gaya

چراغ راہ بجھا کیا کہ رہ نما بھی گیا

چراغ راہ بجھا کیا کہ رہ نما بھی گیا

ہوا کے ساتھ مسافر کا نقش پا بھی گیا

میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی

وہ شخص آ کے مرے شہر سے چلا بھی گیا

بہت عزیز سہی اس کو میری دل داری

مگر یہ ہے کہ کبھی دل مرا دکھا بھی گیا

اب ان دریچوں پہ گہرے دبیز پردے ہیں

وہ تانک جھانک کا معصوم سلسلہ بھی گیا

سب آئے میری عیادت کو وہ بھی آیا تھا

جو سب گئے تو مرا درد آشنا بھی گیا

یہ غربتیں مری آنکھوں میں کیسی اتری ہیں

کہ خواب بھی مرے رخصت ہیں رتجگا بھی گیا

پروین شاکر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2506) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Parveen Shakir, Chiragh Raah Bujha Kya Ke Rah Noma Bhi Gaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 140 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Parveen Shakir.