Social Poetry of Parveen Shakir - Social Shayari

پروین شاکر کی معاشرتی شاعری

تو بدلتا ہے تو بے ساختہ میری آنکھیں

To Badalta Hai To Be Sakhta Meri Ankhen

(Parveen Shakir) پروین شاکر

تجھے مناؤں کہ اپنی انا کی بات سنوں

Tujhe Manao Ke Apni Anaa Ki Baat Sunon

(Parveen Shakir) پروین شاکر

پاس جب تک وہ رہے درد تھما رہتا ہے

Paas Jab Tak Woh Rahay Dard Thama Rehta Hai

(Parveen Shakir) پروین شاکر

پا بہ گل سب ہیں رہائی کی کرے تدبیر کون

Pa Bah Gul Sab Hain Rihayi Ki Kere Tadbeer Kon

(Parveen Shakir) پروین شاکر

بہت سے لوگ تھے مہمان میرے گھر لیکن

Bohat Se Log Thay Mahman Mare Ghar Lekin

(Parveen Shakir) پروین شاکر

بوجھ اٹھائے ہوئے پھرتی ہے ہمارا اب تک

Boojh Uthaye Hue Phurti Hai Hamara Ab Tak

(Parveen Shakir) پروین شاکر

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے

Bikhat Se Koi Shikayat Hai Nah Aflaq Say Hai

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اس کے یوں ترک محبت کا سبب ہوگا کوئی

Is Ke Yun Tark Mohabat Ka Sabab Hoga Koi

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اتنے گھنے بادل کے پیچھے

Itnay Ghany Baadal Ke Peechay

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اپنے قاتل کی ذہانت سے پریشان ہوں میں

–apne Qaatil Ki Zahanat Se Pareshan Hon Mein

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اپنی رسوائی ترے نام کا چرچا دیکھوں

Apni Ruswai Tre Naam Ka Charcha Daikhon

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اب تو اس راہ سے وہ شخص گزرتا بھی نہیں

Ab To Is Raah Se Woh Shakhs Guzarta Bhi Nahi

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے

Ab Bhi Barsaat Ki Raton Mein Badan Toot-ta Hai

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اب ان دریچوں پہ گہرے دبیز پردے ہیں

Ab Un Derichoon Pay Gehray Dabeez Parday Hain

(Parveen Shakir) پروین شاکر

ہم نے ہی لوٹنے کا ارادہ نہیں کیا

Hum Nay Hi Lotney Ka Iradah Nahi Kya

(Parveen Shakir) پروین شاکر

میں فقط چلتی رہی منزل کو سر اس نے کیا

Main Faqat Chalti Rahi Manzil Ko Sir Is Nay Kya

(Parveen Shakir) پروین شاکر

کیا کرے میری مسیحائی بھی کرنے والا

Kya Kere Meri Masehai Bhi Karne Wala

(Parveen Shakir) پروین شاکر

قدموں میں بھی تکان تھی گھر بھی قریب تھا

Qadmon Main Bhi Takan Thi Ghar Bhi Qareb Tha

(Parveen Shakir) پروین شاکر

دھنک دھنک مری پوروں کے خواب کر دے گا

Dhanak Dhanak Meri Poron Ke Khawab Kar Day Ga

(Parveen Shakir) پروین شاکر

دل کا کیا ہے وہ تو چاہے گا مسلسل ملنا

Dil Ka Kya Hai Woh To Chahay Ga Musalsal Milna

(Parveen Shakir) پروین شاکر

چراغ راہ بجھا کیا کہ رہ نما بھی گیا

Chiragh Raah Bujha Kya Ke Rah Noma Bhi Gaya

(Parveen Shakir) پروین شاکر

تراش کر مرے بازو اڑان چھوڑ گیا

Tarash Kar Marey Bazu Odan Chor Gaya

(Parveen Shakir) پروین شاکر

ایک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اٹھا

Aik Sooraj Tha Ke Taron Ke Gharanay Say Otha

(Parveen Shakir) پروین شاکر

اگرچہ تجھ سے بہت اختلاف بھی نہ ہوا

Agarcha Tujh Say Bohat Ikhtilaf Bhi Nah Howa

(Parveen Shakir) پروین شاکر

Records 1 To 24 (Total 113 Records)

Social Shayari of Parveen Shakir - Poetry of Social. Read the best collection of Social poetry by Parveen Shakir, Read the famous Social poetry, and Social Shayari by the poet. Social Nazam and Social Ghazals of the poet. The best collection of Shayari by Parveen Shakir online. You can also read different types of poetries by the poet including Social Shayari from different books of the poet.