Har Koi Kyun Chup Betha Hai Sahib Jee Kuch To Balow

ہر کوئی کیوں چپ بیٹھا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

ہر کوئی کیوں چپ بیٹھا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

خاموشی کا کیا قصہ ہے صاحب جی کچھ تو بولو

آج قلم کا روزہ ہے کیا یا کاغذ تقوے سے ہے

قاصد کیوں فرصت لکھتا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

انگنائی کے پیڑ پہ پنچھی ذکر میں کیوں مصروف نہیں

یہ سناٹا سا کیسا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

مجبوری سے مختاری تک دوری سے نزدیکی تک

آخر یہ کیسا پردہ ہے صاحب جی کچھ تو بولو

کس کس کا منہ بند کرو گے کس کو کس کو روکو گے

برا ملن کے بیچ میں کیا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

جو دروازہ لاچاری کے نام پہ مجھ پر بند رہا

کیا اب بھی وہ بند پڑا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

اس دنیا سے اس دنیا تک رسوا کر دینے کے بعد

اب لوگوں کا کیا کہنا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

کل تک تم کو جان سے پیارا دل کا سہارا لگتا تھا

اب رحمانیؔ کیا لگتا ہے صاحب جی کچھ تو بولو

پرویز رحمانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(441) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of PARWEZ RAHMANI, Har Koi Kyun Chup Betha Hai Sahib Jee Kuch To Balow in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of PARWEZ RAHMANI.