Ik Dooje Ke Baasi Un Ko Aur Basera Kya Maloom

اک دوجے کے باسی ان کو اور بسیرا کیا معلوم

اک دوجے کے باسی ان کو اور بسیرا کیا معلوم

اپنے پن کے باشندوں کو میرا تیرا کیا معلوم

سورج بولے تو سو جائیں سورج بولے تو جاگیں

کیا جانیں یہ دیا جلانا ان کو اندھیرا کیا معلوم

خواب کا جھوٹ جیون سچ میں تل تل مرنا جن کا بھاگ

یہ راتوں کے قیدی ان کو سانجھ سویرا کیا معلوم

بستی سے باہر سانپوں نے بھی تو کچھ پھونکا ہوگا

آدھی راہ سے لوٹا ہو مہمان سپیرا کیا معلوم

باندھی تھیں آشائیں کیا کیا ہم نے اب کے موسم سے

رحمانیؔ اب کون سی رت میں پھولے بہیرا کیا معلوم

پرویز رحمانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(303) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of PARWEZ RAHMANI, Ik Dooje Ke Baasi Un Ko Aur Basera Kya Maloom in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of PARWEZ RAHMANI.