Saneha Nahi Tlta Sanihay Pay Ronay Se

یہ بھی کیا کم ہے کہ ہم بیتاب حالت میں رہے

یہ بھی کیا کم ہے کہ ہم بیتاب حالت میں رہے

بن نہ پائے کچھ بھی لیکن دست قدرت میں رہے

ہم کو آنکھوں میں بسایا وقت نے مانند خواب

اور ہم تعبیر ہو جانے کی حسرت میں رہے

ہم نے صحرا ہو کہ گلشن ایک جیسا کر دیا

جس ٹھکانے بھی رہے زنجیر وحشت میں رہے

اب صلہ حسن عمل کا کیا ملا کیا جانیے

روشنی تھے ہم سو شعلے کی رفاقت میں رہے

خلوت جاں میں بڑی فرصت سے آ بیٹھا ہے غم

عرصۂ فرصت ملا تو ہم بھی فرصت میں رہے

پیرزادہ قاسم

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(691) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Pirzada Qasim, Saneha Nahi Tlta Sanihay Pay Ronay Se in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 63 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Pirzada Qasim.