بند کریں
شاعری عاصمہ جاوید

کچے دھاگے ٹوٹ گئے ہیں

-

kache dhage toot gaye hain


(301) ووٹ وصول ہوئے