بند کریں
شاعری علی احمد

کدھر کی نیند کیسے خواب آنکھیں سو نہیں سکتیں

-

kidher ki neend kaise khawab ankhain soo nahi sakte


(227) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان