بند کریں
شاعری علی حسن شیرازی

یہ کب کہا ہے کہ مرنے کی بات یار نہ کر

-

yeh kab kaha hai


(242) ووٹ وصول ہوئے