بند کریں
شاعری اشرف مغل

زیست ہے بے ثبات کیا کیجے

-

zeest hai besabat


(254) ووٹ وصول ہوئے