بند کریں
شاعری اعجاز بٹالوی

ہزار چاہیں گے پھر بھی تجدیدِ آرزو ہم نہ کر سکیں گے

-

hazar chaheen ge phir bhi tajdeed arzo hum na kar sakeen ge


(184) ووٹ وصول ہوئے