بند کریں
شاعری فریدہ لکھانے

سمجھی نہ جسے میں وہ نظارہ ہے ادھر بھی

-

samjhi na jesy wo nazara hai edhar bhi


(203) ووٹ وصول ہوئے