بند کریں
شاعری فریدہ خانم

دنیا ایک تماشا ہے

-

duniya aik tamasha hai


(228) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان