بند کریں
شاعری فریدہ خانم

وہ خون کر کے امیدوں کا مسکراتے ہیں

-

wo khoon kar k umeedoon ka muskurate hain


(227) ووٹ وصول ہوئے