بند کریں
شاعری معید مرزا

جو خوف مری بات کا مفہوم رہا ہے

-

jo khof meri baat ka mafhoom raha hai


(0) ووٹ وصول ہوئے