بند کریں
شاعری ناطق جعفری

یاقوت و زبر جد بھی تو مرجان بھی تو ہے

-

ya quwaat va zabar jad bhi tu


(220) ووٹ وصول ہوئے