بند کریں
شاعری نوید اکبر

جانے کتنا ٹوٹ گیا ہوں

-

jaanay kitna toot gaya hon


(194) ووٹ وصول ہوئے