بند کریں
شاعری نوید اکبر

قدم قدم انہیں زیر عتاب رکھتا ہوں

-

kadam kadam inhen zer e etaab rakhta hoon


(180) ووٹ وصول ہوئے