بند کریں
شاعری نوید اکبر

کون کہتا ہے چہرہ ترا عام تھا

-

kaun kehta hai


(245) ووٹ وصول ہوئے