بند کریں
شاعری نوید اکبر

زندگی کی قید سے اک دن رہا ہو جائیں گے

-

zindagi ki qaid se


(212) ووٹ وصول ہوئے