بند کریں
شاعری نوشی گیلانی

یہ کیسا خوف تھا رخت سفر بھی بھول گئے

-

Yeh Kaisa Khouaf


(446) ووٹ وصول ہوئے