بند کریں
شاعری قمر رعینی

منزل بھی ہیں رہبر بھی ہیں منزل کے

-

manzil bhi hain rehber bhi hain


(262) ووٹ وصول ہوئے