بند کریں
شاعری قتیل شفائی

نہ کوئی خواب ہمارے ہیں نہ تعبیریں ہیں

-

na koi khawab hamaray hain na taabeerain hain


(311) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان