بند کریں
شاعری شہباز رسول فائق

کچھ زخم مری روح کے گہرے بھی بہت ہیں

-

kuch zakhaam mere rooh k ghere bhi buhat hain


(205) ووٹ وصول ہوئے