بند کریں
شاعری شاہین کاظمی

سوچوں کے سلسلے ہیں کہ خوابوں کے سلسلے

-

Sochon k silsaly hain keh khawbon k silsalay


(2296) ووٹ وصول ہوئے