بند کریں
شاعری شہر یار

یہ کیا ہوا کہ طبیعت سنبھلتی جاتی ہے

-

yeh kiya hua k tabiat sanbhlti jati hai


(217) ووٹ وصول ہوئے