Akaile Pan Ki Talkhi

اکیلے پن کی تلخی

اکیلے پن کی تلخی بُھولنے والی نہیں ھے

کرُوں کیا شام کوئی درد سے خالی نہیں ھے

تِرے غم کے سِوا بھی اور مُجھ کو غم بہت تھے

جوانی صِرف تیرے درد میں ڈھالی نہیں ھے

زمانے کے سِتم سے اِس طرح بے خوف ھُوں میں

کہ ناگن آستِیں میں جِس طرح پالی نہیں ھے

بِچھڑ کے تُجھ سے اِس تنہا سفر میں سوچتا ھُوں

اُجڑنا ھے میری قِسمت میں خُوش حالی نہیں ھے

تیری پائل، تِرے جُھمکے، تِرے کنگن  سلامت

مگر کانوں میں (میرے پیار کی) بالی نہیں ھے

ہرے موسم بھی ڈستے ہی رہے ہیں من کو میرے

شِکستہ دِل کی حالت پر نظر ڈالی نہیں ھے

مُجھے بھی اب کوئی حسرتؔ، نہ ہی ارمان کوئی

مگر کُچھ اب تیری صُورت بھی متوالی نہیں ھے

پروفیسر رشید حسرت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1095) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Professor Rasheed Hasrat, Akaile Pan Ki Talkhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 97 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Professor Rasheed Hasrat.