Dil Kaisa Laga

دِل کیسا لگا

دِل کیسا لگا اور جِگر کیسا لگا ہے؟؟

اے خاک  بسر، عِشق سفر کیسا لگا ہے؟

دیکھا وُہ ھُجوم اب کے تِرےشہر میں، توبہ

ھے کیسا اُدھر اور، اِدھر کیسا لگا ہے؟

اُس شخص کا دامن بھی کہیں چُھوٹ نہ جائے

دِن رات مُجھے دوستو! ڈر کیسا لگا ہے؟

اِک عمر کے بعد، اُس کے نگر سے جو گُزر ہے

اِس شہر کا اِک ایک شجر کیسا لگا ہے۔

تُو نے تو ھوا رُخ کی طرح پھیر لِیں نظریں

مانا کہ نہیں رنج۔ مگر کیسا لگا ہے؟

کیا نذر بجُز اشک کرُوں راہ میں تیری

بس پیش کیا دامنِ تر، کیسا لگا ہے؟

مانا کہ رشیدؔ عِشق نے برباد کیا، دل

افشا نہ کِیا راز، ھُنر کیسا لگا ہے؟ 

پروفیسر رشید حسرت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(929) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Professor Rasheed Hasrat, Dil Kaisa Laga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 97 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Professor Rasheed Hasrat.