Wo Mere Hath Se Yun Bhi

وہ میرے ھاتھ سے یُوں بھی

وُہ میرے  ھاتھ سے یُوں بھی نِکلتا جاتا تھا

عجِیب شخص تھا خوابوں میں ڈھلتا جاتا تھا

وُہ شام کِس کی امانت تھی؟ کِس کو سونپ آیا؟

نِدامتوں سے مِرا دل پِگھلتا  جاتا تھا

مُجھے بھی رنج تھا ایسا بیان ھو نہ سکا

اُسے بھی دُکھ تھا کوئی، جِس میں گلتا جاتا تھا

کِسی کا مُجھ سے بِچھڑنا کبھی نہ بُھول سکا

رُکے رُکے ھُوئے قدموں سے چلتا جاتا تھا

میں اُس کی بزم میں خُود کو سمیٹے بیٹھا رہا

بہت سنبھالا مگر دل پِھسلتا جاتا تھا

جو آدمی کی نفی تھا، غُرُور تھا جس کو

ابھی تو دیکھا اُسے،  ھاتھ ملتا جاتا تھا

فقط خیال سمجھ کر جھٹک دیا تھا  جسے

مِرے وجُود کو اب وُہ نِگلتا جاتا تھا

کِسی غریب کے بچے کی طرح میرا دل

کِھلونے دیکھتا جاتا، مچلتا جاتا تھا

رشید مُجھ پہ کوئی وقت ایسا گزرا ھے

شراب پِیتا تو کُچھ کُچھ سنبھلتا جاتا تھا

پروفیسر رشید حسرت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(784) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Professor Rasheed Hasrat, Wo Mere Hath Se Yun Bhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 97 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Professor Rasheed Hasrat.