Ik Bheer Hai Jalwoon Ki Aur Meri Nazar Tanha

اک بھیڑ ہے جلووں کی اور میری نظر تنہا

اک بھیڑ ہے جلووں کی اور میری نظر تنہا

ہے آئنہ خانے میں خود آئینہ گر تنہا

ان پاؤں کے چھالوں سے پوچھو یہ بتائیں گے

طے کیسے کیا ہم نے شعلوں کا سفر تنہا

جلتے ہوئے موسم میں اس طرح وہ ہنستا ہے

صحرا میں ہنسے جیسے کوئی گل تر تنہا

کیا جانئے کیوں مجھ پر یہ خاص عنایت ہے

کیا جانئے جلتا ہے کیوں میرا ہی گھر تنہا

اک شور قیامت ہے اور بھیڑ ہے چہروں کی

اس دور میں رہتا ہے ہر شخص مگر تنہا

تنہائی کا غم تم کو اس وقت مزہ دے گا

میری ہی طرح تم بھی ہو جاؤ اگر تنہا

قیصر صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(454) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of QAISAR SIDDIQI, Ik Bheer Hai Jalwoon Ki Aur Meri Nazar Tanha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of QAISAR SIDDIQI.