Tootay Howay Khowaboon Ki Chobhan Kam Nahi Hoti

ٹوٹے ہوئے خوابوں کی چبھن کم نہیں ہوتی

ٹوٹے ہوئے خوابوں کی چبھن کم نہیں ہوتی

اب رو کے بھی آنکھوں کی جلن کم نہیں ہوتی

کتنے بھی گھنیرے ہوں تری زلف کے سائے

اک رات میں صدیوں کی تھکن کم نہیں ہوتی

ہونٹوں سے پئیں چاہے نگاہوں سے چرائیں

ظالم تری خوشبوئے بدن کم نہیں ہوتی

ملنا ہے تو مل جاؤ یہیں حشر میں کیا ہے

اک عمر مرے وعدہ شکن کم نہیں ہوتی

قیصرؔ کی غزل سے بھی نہ ٹوٹی یہ روایت

اس شہر میں نا قدرئ فن کم نہیں ہوتی

قیصرالجعفری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(466) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qaiser Ul Jafri, Tootay Howay Khowaboon Ki Chobhan Kam Nahi Hoti in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 24 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qaiser Ul Jafri.