Jalaye

جلائیے

حضور تھوڑی آگ ہی جلائیے

یہ شہر، یوں بھی سرد مہریوں کی نذر ہوچکا

کسی سے ہاتھ کیا ملا کہ ایک سر د لہر پورے جسم میں اتر گئی

چہار سمت دھوپ ہے نہ آگ ہے

کسی شراب کی تپش کسی بدن کا لمس ۔۔۔ کچھ نہیں

مرے ٹھٹھرتے پاوں تھم گئے

مرے تمام خواب جم گئے

اگر نہیں ہے آگ کا کوئی بھی بندوبست

منجمد مکان میں

تو اپنے جسم وجاں کو نوچئے

کوئی بھی آئے سامنے تو گالیاں سنائیے

جلائیے

حضور ایک دوسرے کا خوب دل جلائیے

قمر رضا شہزاد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(856) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qamar Raza Shahzad, Jalaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 82 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qamar Raza Shahzad.