Parda Girne Wala Hai

پردہ گرنے والا ہے

دھواں اٹھنے لگا ہے گنبدوں سے

جلائی جا رہی ہیں پاک روحیں

مساجد کے در و دیوار پر چھینٹے لہو کے

فضا ماتم کناں ہے

ہوا شوریدہ سر ہے

مؤذن خاک کی چادر لپیٹے سو رہے ہیں

خدا ناراض تو کل تک نہیں تھا

مگر اب رابطے سب منقطع ہیں

نہ جانے کون سی سازش ہوئی ہے آسماں پر

جو آدم بٹ رہے ہیں

ہمارے اپنے تن سے اپنے ہی سر کٹ رہے ہیں

کہانی ایک ہی لکھی گئی تھی

فقط کردار بدلے جا رہے ہیں

اچانک کیا ہوا ہے

ملایا جا رہا ہے خیر و شر کو

مٹایا جا رہا ہے بحر و بر کو

زمانے کے قدم تھکنے لگے ہیں

خدا اگلی کہانی لکھ رہا ہے !!!!

قندیل بدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(425) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qandeel Badar, Parda Girne Wala Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qandeel Badar.