Tasveer Ban K Fareem K Shishe Main Reh Giya

تصویر بن کے فریم کے شیشے میں رہ گیا

تصویر بن کے فریم کے شیشے میں رہ گیا

تو کیا گیا کہ وقت بھی سکتے میں رہ گیا

ہاتھوں میں لے کے آ گئی میں چوڑیاں مگر

تو چاہیے تھا تو وہیں میلے میں رہ گیا

اس کو تو روٹھنا تھا بچھڑنا تھا، سو ہوا

جانے یہ درد کیوں میرے سینے میں رہ گیا

جس کے بغیر میں کئی حصوں میں بٹ گئی

کیا تھا جو مجھ سے ریل کے ڈبے میں رہ گیا

اس زلزلے میں میں ہی نہیں ٹوٹ کر گری

تو بھی وہیں کہیں کسی ملبے میں رہ گیا

وحشت، سفر، تلاش، جنوں، رقص، تشنگی

میرا بدن یہ کیسے بگولے میں رہ گیا

امید کی جب آخری قندیلؔ بجھ گئی

رستہ بھٹک کے چاند اندھیرے میں رہ گیا

قندیل بدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(281) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qandeel Badar, Tasveer Ban K Fareem K Shishe Main Reh Giya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qandeel Badar.