Kabhi Yeh Dil Tu Ziada Dharkne Lagta Hai

کبھی یہ دل تو زیادہ دھڑکنے لگتا ہے

کبھی یہ دل تو زیادہ دھڑکنے لگتا ہے

بدن میں خار کی صورت کھٹکنے لگتا ہے

طلسمِ وعدہ و یادِ جنوں کی گولک میں

قدیم عہد کا سکہ کھنکنے لگتا ہے

مقامِ شکر کہ مٹی سے میں جُڑا ہوا ہوں

وگرنہ سر سے فلک بھی سرکنے لگتا ہے

تمہاری چاپ ہے پاؤں کی ، بارشوں جیسی

یہ باغ ، اور طرح سے مہکنے لگتا ہے

ہمارے گھر کے تو برتن بھی آدھے کچے ہیں

اور اس پہ ابرِ سیہ بھی چمکنے لگتا ہے

میں صحن میں شبِ مہتاب میں نہیں آتا

یہ ایک بچہ سا مجھ میں ہمکنے لگتا ہے

کھلی زمین میں رستہ تلاش کرنے دو

نصیحتوں سے تو بیٹا بھٹکنے لگتا ہے

قیوم طاہر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(508) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qayyum Tahir, Kabhi Yeh Dil Tu Ziada Dharkne Lagta Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qayyum Tahir.