Keh Diya Tha Yun Nahi Karna

کہہ دیا تھا کہ یوں نہیں کرنا

کہہ دیا تھا کہ یوں نہیں کرنا

کوئی کارِ جنوں نہیں کرنا

تیرگی بھی خراج مانگے گی

لٙو سے روشن دروں نہیں کرنا

کھردرے ہاتھ دکھ کے ہیں ، لیکن

روح کو نیلگوں نہیں کرنا

بھرنے دینا اڑان بیٹے کو

اس کے پٙر بے سکوں نہیں کرنا

زندگی آرزو سےہوتی ہے

آرزووں کا خوں نہیں کرنا

شہر یاروں سے بڑھ کے جانے کون

کس کو صیدِ زبوں نہیں کرنا

قیوم طاہر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(486) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qayyum Tahir, Keh Diya Tha Yun Nahi Karna in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qayyum Tahir.