Main Khali Hath Tha Aflaak Se Nikalte Hue

میں خالی ہاتھ تھا افلاک سے نکلتے ہوئے

میں خالی ہاتھ تھا افلاک سے نکلتے ہوئے

میں خالی ہاتھ ہوں اب خاک سے نکلتے ہوئے

قبول کون کرے گا یہ ادھڑا جسم مرا

ڈرا ہوا ہوں درِ پاک سے نکلتے ہوئے

تو کیا میں آگ کے تپنے کو تھا بنایا گیا

بشکلِ ظرفِ حسیں چاک سے نکلتے ہوئے

کوئی جواز پلٹنے کا چھوڑ آیا کہاں

میں اپنے پُرکھوں کی املاک سے نکلتے ہوئے

سوال کرتا رہا ، آگ کیوں بجھاتے نہیں

دھواں ، یہ تلخ دھواں ناک سے نکلتے ہوئے

بھروں گا حاضری ارض و سما کے مالک میں

لگے گا وقت ذرا شاک سے نکلتے ہوئے

قیوم طاہر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(240) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qayyum Tahir, Main Khali Hath Tha Aflaak Se Nikalte Hue in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qayyum Tahir.